حمد رب کریم

مصنف : نامعلوم

سلسلہ : حمد

شمارہ : 2017 جنوری

حمد ر ب کریم
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
سورج کے اجالے سے فضاؤں سے ، خلا سے
چاند اور ستاروں کی چمک اور ضیا سے
جنگل کی خموشی سے ، پہاڑوں کی انا سے
پرہول سمندر سے ، پر اسرار گھٹا سے
بجلی کے چمکنے سے ، کڑکنے کی صدا سے
مٹی کے خزانوں سے ، اناجوں سے غذا سے 
برسات سے ، طوفان سے ، پانی سے ، ہوا سے
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
گلشن کی بہاروں سے تو کلیوں کی حیا سے
معصوم سی روتی ہوئی شبنم کی ادا سے
لہراتی ہوئی باد سحر باد صبا سے
ہر رنگ کے ہر شان کے پھولوں کی خبا سے
چڑیوں کے چہکنے سے تو بلبل کی نوا سے
موتی کی نزاکت سے تو ہیرے کی ضیا سے
اوپر سے جھلکتے ہوے فن اور کلا سے
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
دنیا کے حوادث سے ، جفاؤں سے وفا سے
رنج و غم و آلام سے دردوں سے ، دوا سے
خوشیوں سے ، تبسم سے ، مریضوں کی شفا سے
بچوں کی شرارت سے تو ماؤں کی دعا سے
نیکی سے عبادات سے ، لغزش سے ، خطا سے
خود اپنے ہی سینے کے دھڑکنے کی صدا سے
رحمت تیری ہر گام پہ دیتی ہے دلاسے
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
ابلیس کے فتنوں سے تو آدم کی خطا سے
اوصاف براہیم سے یوسف کی حیا سے
حضرتِ ایوب کی تسلیم و رضا سے
عیسیٰ کی مسیحائی سے ، موسیٰ کے عصا سے
نمرود کے ، فرعون کے انجامِ فنا سے 
کعبے کے تقدّس سے تو مروا و صفا سے
تورات سے ، انجیل سے ، قرآن کی صدا سے
یاسین سے ، طہ سے ، مزمل سے ، نبا سے
ایک نور جو نکلا تھا کبھی غار حرا سے
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے

(باوجود کوشش کے شاعر کا نام معلوم نہ ہو سکا)