Download

عبدالحمید عدم


مضامین

وہ باتیں تری وہ فسانے ترے شگفتہ شگفتہ بہانے ترے   بس اک داغِ سجدہ مری کائنات جبینیں تری ، آستانے ترے   بس اک زخمِ نظّارہ ، حصّہ مرا بہاریں تری ، آشیانے ترے   فقیروں کا جمگھٹ گھڑی دو گھڑی شرابیں تری ، بادہ خانے ترے   ضمیرِ صدف م...


  دوستوں کے نام یاد آنے لگے تلخ و شیریں جام یاد آنے لگے   وقت جوں جوں رائگاں ہوتا گیا زندگی کو کام یاد آنے لگے   خوبصورت تہمتیں چبھنے لگیں دل نشیں الزام یاد آنے لگے   پھر خیال آتے ہی شام ہجر کا مرمریں اجسام یاد آنے...


  میکدہ تھا ، چاندنی تھی ، میں نہ تھا اک مجسم بے خودی تھی ، میں نہ تھا   عشق جب دم توڑتا تھا ، وہ نہ تھے موت جب سر دھن رہی تھی ، میں نہ تھا   طور پر چھیڑا تھا جس نے آپ کو وہ میری دیوانگی تھی ، میں نہ تھا   جس نے مہ پا...


  جو تیرے فقیر ہوتے ہیں  آدمی بے نظیر ہوتے ہیں    تیری محفل میں بیٹھنے والے  کتنے روشن ضمیر ہوتے ہیں    پھول دامن میں چند رکھ لیجیے  راستے میں فقیر ہوتے ہیں    زندگی کے حسین ترکش میں  کتنے بے رحم تیر ہوتے ہیں   ...