ناول


مضامین

قسط ۔۱ ہم مولانا عبدالحلیم شرر کا ایک غیر معروف ناول جو عام طور سے دستیاب نہیں، قارئین کی دلچسپی کے لیے شروع کر رہے ہیں۔ اس میں اگرچہ ہم نے مناسب حذف و ترمیم کی ہے لیکن پھر بھی ان قارئین کے لیے ناگوار ہو سکتا ہے جو سوئے حرم کو ایک روایتی قسم کا...


قسط ۔۲ ناول اورمولانا عبدالحلیم شرر کے تعارف کے لیے مارچ کا شمارہ ملاحظہ فرمائیے۔اس قسط میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ قبائلی تعصبات امت مسلمہ کے لیے کس قدر خطرنا ک اور نقصان دہ ہیں۔             موسیٰ سمرقند سے چلا تو جنوب کا راستہ اختیار کیا اس لی...


قسط ۔۳             اس واقعہ کا انجام یہ ہوا کہ سارے بنی تمیم خراسان کے جن جن شہروں میں تھے بگڑ کھڑے ہوئے اور والد کے ساتھ دشمنی کرنے پر آمادہ ہو گئے۔ چنانچہ ان کا ایک بڑا بھاری گروہ خاص مرو میں جمع ہو گیا جہاں والد کی طرف سے میں حکومت کر رہا تھ...


قسط ۔۴              ارسلان کئی بار ترمذ میں بھیس بدل کے آیااورکوششیں کیں کہ مکرو و فریب سے اپنی دلہن شہزادی نوشین کو بھگا لے جائے مگر کامیابی تودرکنار اس کو قلعہ کے اندر داخل ہونے کا بھی موقع نہ ملا۔ فقط ایک بار اس کو شہزادی سے ملنے کا موقع مل ...


قسط ۔۵             اسیر شدہ دشمن کو آزاد کر کے موسی اپنی دونوں مہ جبین اور دل رباؤں کے ساتھ قلعہ میں آیا اور اس کو اس کی مطلق خبر نہ تھی کہ قتلق خانم ارسلان کے ساتھ بھاگ جانے پر تیار تھی اور اس کے دل میں بے وفائی کے جذبات بھرے ہوئے ہیں بلکہ اسے...


            اب موسیٰ بن عبداللہ بن خازم اپنی قوت کو روز بروز بڑھاتا جاتا تھا ۔ قلعہ کی مضبوطی کو یوماً فیوماً ترقی دیتا۔ اسلحہ ، زرہ ، بکتر اچھی اچھی منجنیقوں اور ہر قسم کے سامان جنگ کو فراہم کرتا اور اس کے ساتھ اس کے علم کے نیچے بہادران عرب کا بھ...


            موسٰی: ‘‘مضائقہ نہیں ۔ ان جھگڑوں اور رکاوٹوں سے میرے عیش کی لذت زیادہ ہو جاتی ہے، ا س کے بعد اسے قید خانہ میں بھیج دیااور سب قیدی اپنے سرداروں میں تقسیم کر دیے ۔اب وہ اس تدبیر میں مصروف ہوا کہ خزاعی کے عرب حملہ آوروں کو بھی ایسی شکست د...


قسط ۔۳ شر اور خیر کی ازلی دشمنی’ دور جدید کی مادیت پرستی سے اکتا کر ماضی کی ساد ہ زند گی کی طرف پلٹنے کی تمنا اور فطر ت میں ودیعت انسانی جذبوں کی شکست و ریخت کی تحیرخیز داستاں۔ ‘‘مسٹر بلال! کیا آپ کے ملک میں آمریت ہے جو کراچی کے لوگ اس قدر ب...


قسط ۔۴ شر اور خیر کی ازلی دشمنی’ دور جدید کی مادیت پرستی سے اکتا کر ماضی کی ساد ہ زند گی کی طرف پلٹنے کی تمنا اور فطر ت میں ودیعت انسانی جذبوں کی شکست و ریخت کی تحیرخیز داستاں۔ کئی گھنٹوں کی بے ہوشی کے بعدبل کو جب ہوش آیا تواس نے اپنے آپ کوپ...


 قسط ۔۵ شر اور خیر کی ازلی دشمنی’ دور جدید کی مادیت پرستی سے اکتا کر ماضی کی ساد ہ زند گی کی طرف پلٹنے کی تمنا اور فطر ت میں ودیعت انسانی جذبوں کی شکست و ریخت کی تحیرخیز داستاں۔             وہ اپنے مخصوص انداز میں بولا:‘‘یہ مہمان خانہ ’’ جہا...